When I pass through the city l Urdu Sad Poetry

Urdu-Sad-Ghazal
Urdu Sad Ghazal

جب ترے شہر سے گزرتا ہوں


کس طرح روکتا ہوں اشک اپنے
کس قدر دل پہ جبر کرتا ہوں
آج بھی کار زارِ ہستی میں
جب ترے شہر سے گزرتا ہوں

اس قدر بھی نہیں مجھے معلوم
کس محلے میں ہے مکاں تیرا
کون سی شاخ ِ گل پہ رقصاں جانے
رشک ِ فردوس، آشیاں تیرا
جانے کن وادیوں میں اترا ہے
غیرت ِ حسن، کارواں تیرا
کس سے پوچھوں گا میں خبر تیری
کون بتلائے گا نشاں تیرا
تیری رسوائیوں سے ڈرتا ہوں
جب ترے شہر سے گزرتا ہوں

حال ِ دل بھی نہ کہہ سکا گرچہ
تو رہی مدتوں قریب مرے
کچھ تری عظمتوں کا ڈر بھی تھا
کچھ خیالات تھے عجیب مرے
آخرِ کار وہ گھڑی آئی
باروَر ہوگئے رقیب مرے
تو مجھے چھوڑ کر چلی بھی گئی
خیر ! قسمت مری، نصیب مرے
اب میں کیوں تجھ کو یاد کرتا ہوں
جب ترے شہر سے گزرتا ہوں

گو زمانہ تری محبت کا
ایک بھولی ہوئی کہانی ہے
تیرے کوچے میں عمر بھر نہ گئے
ساری دنیا کی خاک چھانی ہے
لذت ِ وصل ہو کہ زخم فراق
جو بھی ہو تیری مہربانی ہے
کس تمنا سے تجھ کو چاہا تھا
کس محبت سے ہار مانی ہے
اپنی قمست پہ ناز کرتا ہوں
جب ترے شہر سے گزرتا ہوں

اشک پلکوں پہ آ نہیں سکتے
دل میں ہے تیری آبرو اب بھی
تجھ سے روشن ہے کائنات مری
تیرے جلوے ہیں چار سو اب بھی
اپنے غم خانہء تخئیل میں
تجھ سے ہوتی ہے گفتگو اب بھی
تجھ کو ویرانہء تصور میں
دیکھ لیتا ہوں روبرو اب بھی
اب بھی میں تجھ سے پیار کرتا ہوں
جب ترے شہر سے گزرتا ہوں

آج بھی کار زار ہستی میں
تو اگر ایک بار مل جائے
کسی محفل میں سامنا ہو جائے
یا سر راہگزر مل جائے
اک نظر دیکھ لے محبت سے
ایک لمحے کا پیار مل جائے
آرزؤوں کو چین آ جائے
حسرتوں کو قرار مل جائے
جانے کیا کیا خیال کرتا ہوں
جب ترے شہر سے گزرتا ہوں

آج میں اُس مقام پر ہوں جہاں
رسن و دار کی بلندی ہے
میرے اشعار کی لطافت میں
تیرے کردار کی بلندی ہے
تیری مجبوریوں کی عظمت ہے
میرے ایثار کی بلندی ہے
سب ترے درد کی عنایت ہے
سب ترے پیار کی بلندی ہے
تیرے غم سے نباہ کرتا ہوں
جب ترے شہر سے گزرتا ہوں

تجھ سے کوئی گلہ نہیں مجھ کو
میں تجھے بے وفا نہیں کہتا
تیرا ملنا خیال و خواب ہوا
پھر بھی نا آشنا نہیں کہتا
وہ جو کہتا تھا مجھ کو آوارہ
میں اُسے بھی بُرا نہیں کہتا
ورنہ اک بے نوا محبت میں
دل کے لٹنے پہ، کیا نہیں کہتا
میں تو مشکل سے آہ بھرتا ہوں
جب ترے شہر سے گزرتا ہوں

کوئی پرسان حال ہو تو کہوں
کیسی آندھی چلی ہے تیرے بعد
دن گزارا ہے کس طرح میں نے
رات کیسے ڈھلی ہے تیرے بعد
شمع اُمید صرصر ِ غم میں
کس بہانے جلی ہے تیرے بعد
جس میں کوئی مکیں نہ رہتا ہو
دل وہ سونی گلی ہے تیرے بعد
روز جیتا ہوں، روز مرتا ہوں
جب ترے شہر سے گززتا ہوں

لیکن اے ساکن ِ حریم ِ خیال
یاد ہے دور ِ کیف و کم کہ نہیں
کہ کبھی تیرے دل پہ گزرا ہے
میری محرومیوں کا غم کہ نہیں
میری بربادیوں کا سُن کر حال
آنکھ تیری ہوئی ہے نم کہ نہیں
اور اس کار زار ِ ہستی میں
پھر کبھی مل سکیں گے ہم کہ نہیں
ڈرتے ڈرتے سوال کرتا ہوں
جب ترے شہر سے گزرتا ہوں


When I pass through the city


How do I stop my tears?
How much I oppress my heart
Even today in the car of existence
When I pass through the city

I don't even know that much
In which neighborhood is your house?
Which branch of the flower to dance on?
Jealousy of Paradise, your hopes
It has landed in known valleys
Ghairat-e-Hasan, your caravan
Who will I ask about your news?
Who will tell your sign?
I am afraid of your shame
When I pass through the city

I couldn't even tell the state of my heart though
So he died for a while
There was also the fear of some greatness
Some thoughts were strangely dead
At last the hour came
Competitors die
So she left me
No! Good luck, good luck
Why do i miss you now
When I pass through the city

Although the time of wet love
It's a forgotten story
You haven't been in my coach all your life
The whole world is dusted
The pleasure of connecting the wounds of separation
Whatever it is, please
What did i want you for
With what love have you given up?
I am proud of my shirt
When I pass through the city

Tears cannot come to the eyelids
Your honor is still in my heart
The universe is brighter than you
There are still four hundred of you
In your grief house imagination
I still talk to you
I imagine you desolate
I can still see the face
I still love you
When I pass through the city

Even today in the car czar entity
So if found once
Face it at a party
Or get a head passerby
Take a look with love
Find a moment of love
Let the wishes come to China
Let the regrets be found
I don't know what to think
When I pass through the city

Today I am where I am
The height of the rope is
In the pleasure of my poems
Your character is high
The greatness of your compulsions
My selflessness is high
All is pain
The height of love is above all
I live with your grief
When I pass through the city

I have no problem with you
I do not call you unfaithful
It was a dream to meet you
Still doesn't say unfamiliar
What he said made me wander
I don't call him bad either
Otherwise, in an unconditional love
When the heart beats, what does he not say?
I sigh with difficulty
When I pass through the city

If there is any question, let me know
What a storm has gone after you
How have I spent the day?
How is the night after you
A candle of hope in a moment of sorrow
What excuse is there after you?
In which no one lives
The heart is that golden street after you
I live every day, I die every day
When I pass through the city

But, O inhabitant of the sanctuary of thought
I remember the era of Kaif and Kam or not
That has ever passed in your heart
The grief of my frustrations or not
Listen to my ruin
Your eye is wet or not
And in this caring entity
We will never meet again
I ask in fear
When passing through the city

Thanks For Read : Please share with your friends

Post a Comment

0 Comments